پستانی جماع کیا ہے اور اس عمل کا کیا فائدہ حاصل ہے؟

پستانی جماع کیا ہے اور اس عمل کا کیا فائدہ حاصل ہے؟

پستانی جماع یا پستانی مباشرت ایک جنسی عمل ہے جس میں عورت کے پستان اور مرد کا عضو تناسل باہم جنسی تحریک کے لیے استعمال ہوتے ہیں۔ یہ عمل جماع سے پہلے بوس و کنار کا بھی حصہ ہوتا ہے اور غیر مدخولہ جماع کے طور بھی کیا جاتا ہے۔

اس عمل میں مرد کے عضو تناسل کو عورت کے پستانوں کے درمیان رکھ کر آگے پیچھے حرکت دی جاتی ہے اور اس دوران پستانوں کو عضو کے گرد دبا کر اسے مناسب تحریک کیلے ایک تنگ جگہ مہیا کی جاتی ہے۔ برطانوی سائنسدان ایلکس کمفرٹ کے مطابق پستانی جماع سے ان عورتوں میں باہمی احتلام حاصل کیا جا سکتا ہے جن کے پستان زیادہ حساس ہوتے ہیں۔

عورت کے پستان جنسی لحاظ سے حساس هوتے ہیں کچھ عورتیں صرف پستانوں کے اشتعال سے بھی آرگزم حاصل کر لیتی ہیں لیکن ایسی عورتوں کی تعداد زیادہ نہیں ہے. عورت کی چھاتیوں کے ابھار یعنی بریسٹ کا سایز برا چھوٹا بھی ہو سکتا ہے لیکن اس بات کا ان کے جنسی لطف و لذّت کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہوتا عام طور پر چھوٹے بریسٹ برے بریسٹ کی نسبت زیادہ حساس ہوتے ہیں اور ویسے بھی یہ جنس مخالف کے لیے بہت کشش رکھتے ہیں- بریسٹ میں نیپلز جنسی لہٰذ سے بہت ہی حساس ہوتے ہیں اور یہ فورا ہی عورت میں جنسی ہیجان پیدا کر دیتا ہے- جنسی ہیجان میں نیپلز تن جاتے ہیں لیکن دودھ پلانے والی عورتوں میں ایسا نہیں ہوتا- اور ایک بہت ہی دلچسپ بات یہ ہے کہ دونوں نیپلز میں سے ایک زیادہ حساس ہوتا ہے عورت کو اس چیز کا علم ہونا چاہیے تا کے وہ جنسی لطف کے حصول کے لیے اپنے خاوند کو بتا سکے-

Leave a Reply