وہ کمینہ درزی اور میری زندگی کی بربادی، درد بھری داستان

وہ کمینہ درزی اور میری زندگی کی بربادی، درد بھری داستان

یہ ان دنوں کی بات ہے جب ہمارے گھر میں شادی کی تقریب تھی میں گھر میں اپنے بیٹے کو ساس کے پاس چھوڑ کر درزی کے پاس سوٹ لے کر گئی اس دن اتوار تھا میں جب اس کی دوکان پر پہنچی تو دوکان میں صرف ایک کاریگر تھا میں نے اسکو سوٹ دیا اور بولی یہ مجھے ایک آدھ دن میں ارجنٹ چاہیئے اس نے رجسٹر کو ڈھونڈا لیکن وہ نہیں ملا اس نے کہا باجی رجسٹر کہیں گم ہوا ہے اگر آپ کل اپنے کپڑوں کا سائز لے کر آجائیں تو مہر بانی ہوگی میں بولی اس کے علاوہ کچھ نہیں ہوسکتا کیا؟ تو اس نے بولا اگر میں آپ کا ناپ لوں تو کوئی اعتراز تو نہیں ہوگا میں بولی کتنی دیرلگے گی تو اس نے بولا باجی پانچ دس منٹ، میں بولی ٹھیک ہے لےلو اب مجھے کیا معلوم تھا کہ وہ مجھے جنسی ہراساں کا پلان بنا چکا ہے.

اس نے مجھے اندر روم میں جانے کا بولا میں اندر چلی گئی وہ فیتہ لے کر آگیا پھر اس نے میرا دوپٹہ اتار کر سائیڈ پر رکھہ دیا پھر میرا ناپ لینے لگا جب سینے کا ناپ لیا تو اسنے چھاتی کو ہلکے سے دبایا اور بولا باجی آپ تو بہت خوب صورت ہیں میں صرف ہنس دی بس یہی میری غلطی تھی عورت کہتے ہیں ہنسی تو پھنسی اس سے مرد بولڈ ہو جاتا ہے

پھر اس نے بقیہ ناپ لیا پھر میں بیٹھ گئی اس نے کچھ باتیں کی اور بولا آپ کی شلوار پلیز بھیج دینا میں نے بولا کیوں اس نے بولا شلوار کی فتٹنگ اس کی ناپ دیکھہ کر ہی ٹھیک آتی ہے میں بولی ابھی لے لو اس نے بولا آپ ابھی لینے دیں گی میں بولی لے لو مجھے ابھی بھی اندازہ نہٰں ہوا وہ ناپ نہیں بلکہ شرمناک کام کا بول رہا تھا.

وہ قریب آیا اور میری قمیض تھوڑی اوپر کی اور ناپ لینے لگا پھر اس نے ایک دم میرے جسم کے نازک حصوں کو ٹچ کیا میں بولی کیا کرہے ہو اس نے بولا آپ شلوار اتار دیں پھر کچھ نہیں ہوگا میں سمجھ گئی کہ اس کی نیت خراب ہے مجھ پر لیکن میں کچھ نہیں بولی. اس نے بولا اپ اس روم میں چلی جائیں میں اٹھہ کر چلی گئی تو اس نے بولا اگر کچھ پسند آجائے تو پہن کر دیکھہ سکتی ہو میں بولی ٹھیک ہے

میں اندر گئی تو ایک بڑا سا حال تھا اس میں قسم قسم کے کپڑے تھے جن میں برا نایٹ ڈریس فیشن ڈریس پینٹی وغیرہ تھے میں ایک دم پلٹی لیکن اس نے مجھے مڑنےنہیں دیا میں بولی کیا کرہے ہو وہ بولا میں تمھارے ساتھ شرمناک کام کرنا چاہتا ہوں میں بولی مجھے نکلنے تو دو پھر اس نے مجھے چھوڑ دیا میں باہر نکل گئی اور فوران بھاگ گئی.

اس واقعہ کے بعد وہ کمینہ درزی کسی اور دور دراز جگہ پہ دوکان شفٹ کر کے یہاں سے چلا گیا ایک دن میں اپنے شوہر کے ساتھ آئس کریم پارلر میں تھی وہ بھی وہاں آگیا مجھے دیکھ کے ہلکا سا مسکرایا لیکن میں نے منہ دوسری جان ب کر لیا اب اس کمینے درزی کی خاطر اپنا گھر تو نہیں برباد کر سکتی تھی.

Leave a Reply