ہمبستری کے بعد جسم کا کونسا حصہ دھونا چاہیے؟

ہمبستری کے بعد جسم کا کونسا حصہ دھونا چاہیے؟

جماع کا لفظ عربی اساس جمع سے اخذ کیا جاتا ہے اور اس کے معنی جمع ہو جانا یا باہم ملنا کے ہوتے ہیں جبکہ اس باھم ملنے سے عمومی طور پر مراد جنسی طور پر ملنے کی ہوتی ہے۔ اسی مفہوم کو عام طور پر جنسی روابط، مباشرت، ہم بستری وغیرہ کے ناموں سے بھی اختیار کیا جاتا ہے. اور طبی تعریف کی رو سے مؤنث و مذکر کے مابین ایسا رابطہ کے جس میں مذکر کے جسم سے منی کا انتقال، مؤنث کے جسم کی جانب واقع ہو جماع کہلایا جاتا ہے۔


ہمبستری کے بعد جسم کا کونسا حصہ دھونا چاہیے؟

ہمبستری کے بعد عضو خاص کا دھونا ضروری ہے.صحبت اور قربت کے بعد اپنے عضو خاص کو دھو لینا چائیے اس سے بدن تندرست رہتا ہے لیکن ہمبستری کے فورا بعد ٹھنڈے پانی سے نہ دھوئے کیونکہ اس طرح بخار آ جانے کا اندیشہ ہے اتنی دیر رک کر دھوئےکہ بدن کی حرارت اعتدال پر آ جائے

عضو خاص کو نیم گرم پانی سے دھو لیں اگر پانی گرم نہ ہو تو تھوڑی دیر رک کر دھونے میں کوئی مضائقہ نہیں ۔


ہمبستری کے بعد کیا کرنا چائیے

ہمبستری کے بعد سرد ہوا میں نکلنے یا آلہ تناسل کو ٹھنڈے پانی سے دھونے یا ٹھنڈے پانی سے نہانے سے پرہیز کریں ۔

ہمبستری کے بعد بلخصوص جب کہ خالی پیٹ میں ہمبستری کی ہو تب ٹھنڈا پانی پینا یا ٹھنڈا مشروب پینا سخت نقصان دہ ہے اس سے جگر کی حرارت کم ہو جاتی ہے اور لقوہ ، فالج ،رعشہ جیسے امراض پیدا ہونے کا اندیشہ ہو سکتا ہے ۔

ہمبستری کے فوراَ بعد پیشاب کر لینا چائیے کیونکہ اس سے مادہ تولید جو باریک رگو ں میں ہوتا ہے خارج ہو جاتا ہے ۔

Leave a Reply