سات سالہ بچے نے چیک پوسٹ پر پہنچ کر خود کو

سات سالہ بچے نے چیک پوسٹ پر پہنچ کر خود کو

دہشت گردی کی سب سے خطرناک و مذموم دہشت گردی وہ ہے جو کہ مذہب کے نام پر کی جاتی ہے ۔

اس طرح کی کاروائی رحمن کی رضا کے لئے نہیں بلکہ شیطان کی رضا کے لئے ہوتی ہے ۔ جس کا مقصد شیطانی کارندوں کے خطرناک عزائم کو پورا کرنا ہوتا ہے ۔ ایسا ہی ایک واقعہ عراق کی چیک پوسٹ پر پیش آیا۔

 

تفصیلات کے مطابق ایک سات سالہ خوفزدہ بچہ  چیک پوسٹ کی طرف آیا ۔ اور وہاں ٹہلنے لگا ۔ اس دوران ڈیوٹی پو موجود جوانوں کو اس پر سک گزرا ۔ ایک فوجی جوان نے اسے پاس بلایا ۔ اور یہاں وہاں کی باتیں پوچھنے لگا ۔ دوران گفتگو بچے نے ایک ایسی بات کہ دی کہ وہاں موجود لوگوں کے اوسان خطا ہو گئے ۔

 

 بچے نے ان سے کہا کہ ا س کے جسم کے ساتھ بم باندھا گیا ہے جو کسی وقت بھی پھٹ سکتا ہے ۔

وہاںموجود فوجیوں نے فیصلہ کیا کہ اپنے ساتھ اس بچے کی جان بھی بچانی ہے ۔ انہوں نے بچے کی قمیض احتیاط سے اتروائی ۔ پھر بم کا جائزہ لیا ۔ اور پھر کافی مشقت کے بعد اس بم کو ناکارہ بنا گیا ۔

 

تصویر وں میں دیکھا جا سکتا ہے کہ بم بچے کے پیٹ کے ساتھ باندھا گیا ہے ۔ جسے ایک فوجی اہلکار ناکارہ بنا رہا ہے ۔

Leave a Reply