ننھی بچی نے جب ماں کی صدا لگائی ہوگی تو تیرا عرش بھی ہلا ہوگا،رویا ہوگا علی محمد خان کی قومی اسمبلی میں تقریر سے ہر آنکھ اشک بار

ننھی بچی نے جب ماں کی صدا لگائی ہوگی تو تیرا عرش بھی ہلا ہوگا،رویا ہوگا علی محمد خان کی قومی اسمبلی میں تقریر سے ہر آنکھ اشک بار

نیلی آنکھوں والی گڑیا کے قتل سے ہر آنکھ اشک بار ہے ،ہر دل افسردہ ہے ۔ عوام تو کیا سیاستدان بھی غمزدہ ہے لیکن پی ٹی آئی کے رہنما علی محمد خان نے سب کے جذبات کی رہنمائی کر ڈالی
علی محمد خان نے اپنی تقریر میں کہا کہ : جب اس نے آخری بار اپنی ماں کو پکارا ہوگا تو اللہ کا عرش بھی رویا ہوگا ، ہمیں کوئی احساس بھی ہے کہ نہیں یا ایک دوسرے پر ہمیشہ کی طرح تنقید ہی کرتے رہیں گے ۔ ان لوگوں کا ایک ہی علاج ہے کہ ان کو قرآن کے مطابق سزائیں دی جائیں ان کو سر عام بازار میں سولی لٹکایا جائے جب تک ہمارے معاشرے میں ہمارے ملک میں اسلام کانظام نہیں ہوگا تب تک ایسے المیے جنم لیتے رہیں  گے ۔ اگر معاشرہ کو سدھارنا ہے تو ہمیں مل کر اس کا حل نکالنا ہوگا کہ کل میری اور آپ کی بیٹی اس ظلم کا شکار نہ ہو ۔ میں کل زینب کے والد سے ملا ہوں اس نے میرے کندھے پر سر کر روتے ہوئے کہا کہ مجھے انصاف چاہیے ۔ یاد رکھو جہاں قاتل معلوم نہ ہو وہاں حکمران ذمہ دار ہوتا ہے علامہ اقبال نے کہا تھا ۔وہ معزز تھے زمانہ میں مسلمان ہو کر ۔ تم خوار ہوئے تارک قرآن ہو کر۔ دس بندوں کو لٹکا دو پھر دیکھنا کہ کون پھر اس طرح جرم کی جسارت کرے گا ۔

Leave a Reply